Pages

Monday, 14 October 2013

ظلم

تب انہوں نے فیصلہ کیا کہ وہ مزید ظلم ہوتا نہیں دیکھیں گے ظالموں کے قہقہے اور مظلوموں کی چیخیں نہیں برداشت کریں گے . انہوں نے اپنے کانوں میں سیسہ ڈال لیا اور آنکھوں میں دہکتی سلائیاں پھیر لیں . اب وہ امن کے نغمے گاتے ہیں اور اپنے اپنے خداؤں کی حمد و ثناء کرتے ہیں. ان کی زبانیں آزاد ہیں. 

1 comments:

افتخار اجمل بھوپال نے لکھا ہے کہ

کریلہ کڑوا ہوتا ہے اور نیم بھی کڑی ہوتی ہے ۔ محاورہ ہے ایک کریلہ دوسرے نیم چڑھا ۔ نہ کریلہ کو کریلے پر چڑھا کہتے ہیں اور نہ نیم کو نیم پر چڑھی کہتے ہیں لیکن آپ نے یہ رسم بھی توڑ دی اور مجنوں دیوانہ بن گئے

اگر ممکن ہے تو اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔